روحانی ڈائجسٹ / علم و معرفت / تصوّف / لعلن لعل لطیف کہے

لعلن لعل لطیف کہے

یہ مضمون اپنے دوستوں سے شئیر کریں

 

 

شاہ عبداللطیف بھٹائی کا شمار دنیا کے اہم صوفی شعرا ء میں ہوتا ہے ۔ شاہ جو رسالو آپ کی انسان دوستی، دھرتی سے محبت، عشق الٰہی پر مشتمل کلام ہے۔ یہ 30 ابواب پر مشتمل ہے جنہیں سُر کا نام دیا گیا ہے، اس میں تین ہزاراڑتیس اشعار اور ایک سو پچانوے منظومات یا کافیاں ہیں جن میں سات سو تین آیات ِقرآنی واحادیث ِنبوی کے حوالے ہیں۔ شاہ صاحب ؒ کا کلام سندھ کی حدود سے نکل کر برصغیر پاک وہند اور ایشیا سے بڑھ کر ساری دنیامیں مشہور ہوگیا اور اب تک جرمن، انگریزی، ہندی، پنجابی، عربی ، فرانسیسی سمیت کئی بانوں میں اس کے تراجم ہوچکےہیں ۔

شاہ سائیں کے وصال کے 114 برس بعد 1866ء میں جرمن مستشرق ڈاکٹر ارنسٹ ٹرمپ Ernest Trump نےشاہ جو رسالو کا جرمن زبان میں ترجمہ کیا۔ ان کے بعد مسز این میری شمل Annemarie Schimmel نے بھی شاہ عبداللطیف کے کلام کا جرمن زبان میں ترجمہ کیا، سندھ یونیورسٹی جامشورو کے بانی علامہ امداد علی امام علی قاضی کی جرمن نژاد اہلیہ ایلیسا قاضی Elissa Kazi نے انگریزی ترجمہ کیا، 1940ء میں ڈاکٹر ایچ ٹی سولرے Dr H.T Sorley نے شاہ جو رسالو کا منظوم انگریزی ترجمہ آکسفورڈ یونیورسٹی پریس سے شایع کرکے شاہ صاحب ؒ کا کلام یورپ میں متعارف کرایا۔

تارا چند، ڈاکٹرہوتی چند گربخشانی اور کلیان بولچندایڈوانی نے شاہ کا کلام ہندوستان میں پھیلایا جس کے ہندی تراجم بھی ہوئے، شیخ ایاز ،رشید احمد لاشاری، آغا سلیم اور پروفیسر آفاق صدیقی کے مقبول تراجم نے اردو زبان میں آپ کے عارفانہ کلام کا فیض عام کیا۔  ….

 

 

 

 

 

شاہ لطیف کے کلام سے چند اشعار

 

اَول الله عَلِيمُ، اعليٰ، عالَمَ جو ڌَڻِي
قادِرُ پنهنجي قُدرت سين، قائم آهِ قديم
والي، واحِدُ، وَحۡدَهٗ، رازق، رَبُّ رَحِيم
سو ساراه سچو ڌڻي، چئِي حَمدُ حَڪِيم
ڪري پاڻ ڪَرِيمُ، جوڙُون جوڙَ جهان جي

اوّل نام اللہ کا اعلیٰ اور علیم
قادر اپنی فطرت سے قائم اور قدیم
والی واحد وحدهٔ رازق رب رحیم
بڑھ کر ہے ہر حمد سے اس کی حمد حکیم
ہے سارے سنسار کا مالک وہی کریم

 

مَنڌُ پئندي مون، ساڄَنُ سهي سُڃاتو؛
پِي پِيالو عِشقَ جو، سڀڪِي سمجھيو سُون؛
پِريان سندي پارَ جِي، اَندرِ آڳ اَٿُون؛
جِئڻُ ناهي جَڳَ ۾، ڏينهن مِڙيئي ڏُون؛
اَلا، عَبۡدُاللَّطِيفُ چئي، آهين تُون ئي تُون.

مدھر ہی کے میں نے اپنے پیارے ساجن کو پہچان لیا
یہ پریت کا ناتا کر کے میں نے جانے کیا کیا جان لیا
اس پارکی ا گنی ہے من میں جس پار سے میں نے گیان کیا
یہ جگ ہے دو دن کی مایا ساجن ہم نے یہ مان لیا
کہے ‘‘لطیف’’ کہ تو ہی تو ہے، یہ سارا جگ چھان لیا

 

جي ڀائِين پِرِينءَ مِڙان ته سِکُ چوران ڪِي ڌاتِ
جاڳَڻُ جَشَنُ جن کي، سُکُ نه ساري راتِ؛
اُجِھي ٻُجِھي آئيا، وائي ڪَنِ نه واتِ؛
سَلي سُوريءَ چاڙهيا، بيان ڪَنِ نه باتِ؛
توڻي ڪُسَنِ ڪاتِ ته به ساڳِي سَلَنِ ڪينَ ڪِي.

اپنے محبوب سے اگر ہے پیار
سیکھ لے پہلے چور کے اطوار
رات بھر جاگنا ہو کام ترا
نیند کا سکھ نہ ہو تجھے درکار
تھک بھی جائے جو دوڑ دھوپ سے تو
دل نہ ہو دوڑ دھوپ سے بیزار
اک تیرے دل میں اک زبان پر ہو
خوف تعزیر، جرم سے انکار
ٹکڑے ٹکڑے ترے اگر اڑ جائیں
نہ کرے ان کے راز کا اظہار

 

وِرسِيا ويڄَ ويچارا! دِل ۾ دَردُ پِرينِ جو؛
اُٿِيو ويڄا! مَ وهو، وَڃو ڊَبَ کڻِي؛
ٻُڪي ڏيندا ٻاجَھ جي، آيا سُورَ ڌَڻي؛
آيا جيءَ جِيارا، دِل ۾ دَردُ پرِينِ جو.

کیا اس کو کوئی مٹائے یہ روگ میرے من کا
مرے دل میں درد سجن کا
اے چارہ سازو! جاؤ لے جاؤ دوائیں اپنی
یہ گھاؤ ہے مجھ برھن کا
وہ جی کا جیارا آئے جیون کا روگ مٹائے
دن آئے پریت ملن کا
مرے دل میں درد سجن کا

 

عاشَق زهر پِياڪَ، وِهُ ڏسِي وِهُسَنِ گھڻو
ڪڙي ۽ قاتلَ جا، هميشہ هيراڪَ
لڳين لنؤ، لَطِيفُ چئي، فَنا ڪيا فِراقَ
توڻي چِڪَنِنِ چاڪَ، ته به آهَ نه سَلِن عامَ کي

غذاے عاشقاں ہے، زہر قاتل
اسے وہ دیکھ کر، ہوتے ہیں شاداں
فدائے ہر ادائے قاتلانہ
نثار جنبش زنجیر زنداں
چھپائے ہیں دلوں میں زخم کاری
تبسم ریز ہیں لب ہائے خنداں

 

تهڙا چالِيها نه چالِيھَ، جھڙوپسڻ پرينءَ جو؛
ڪهڙي ڪاتِبَ! ڪَرِئين، مٿي پنن پِيههَ؛
جي ورقَ وارِين وِيھَ، ته اَکر اُهوئِي هيڪڙو.

کیوں لگایا ہے سامنے ناداں
تہ بہ تہ کاغذوں کا یہ انبار
فائدہ کیا ورق الٹنے سے
ایک ہی لفظ ہے تجھے درکار
صرف چلہ کشی سے کب ہوگا
حسنِ محبوب کا تجھے دیدار

 

ظاهر ۾ زاني، فِڪرَ منجھ فنا ٿيا؛
تنين کي تعليم جِي، ڪُڙِه اندر ڪانِي؛
حرفُ حَقّانِي، دَورُ ڪيائون دل ۾.

جو بظاہر ہیں تنگ اہل جہان
ان کا باطن ہے چشم عرفاں
ان کے لب پر ہے ورد حقانی
اور سینے میں عشق کا پیکاں

 

طَالِبُ ڪَثَرَ، سونهن سَرُ، اِيَ رومِيءَ جِي راءِ؛
ماڙهُو اِتِ ڪِياءِ، مَنڊُ نه پسين مَنڊيو!

موج زن چشمہ حقیقت ہے
قولِ رومی پیامِ راحت ہے
جس نے دیکھی وہ ہستی مطلق
وہ مجسم سکوتِ حیرت ہے

 

محبّت جي ميدان ۾، سِرَ جو ڪر مَ سانگُ؛
سورِيءَ سُپيرِين جي، چَڙهُ ته ٿئين چانگُ؛
عشق آهي نانگ، خبر کاڌَنِ کي پوي.

دوستو! عرصی محبت ہے
اپنے سر کی نہ تم کرو پروا
باطل کم نگاہ کیا جانے
مے سر دار راہِ دار بقا
سانپ ہے عشق یہ وہی جانے
جو اسے جسم سونپ دے اپنا

 

جي تَتو تَنُ تنُورَ جئن، ته ڇَنڊي ساڻُ ڇَماءِ؛
آڻي آڳِ اَدب جي، ٻاري جانِ جلاءِ؛
بُرقعان اندر بازيون، پنهنجو سڀ پچاءِ؛
لُڇَڻُ لنؤُ، لَطِيفُ چئي، پَڌرِ هَڏِ مَ پاءِ؛
متان لوڪ لَکاءِ، وصالان وچ پَئي!

بجھاؤ آنسوؤں سے آتش تن
نہیں ان کے سوا غمخوار کوئی
میسر ہو اگر عزلت نشینی
تو پھر منزل نہیں دشوار کوئی
یہاں اہل جہاں سے دل لگا کر
نہ پائے گا سراغ یار کوئی

 

ساٿَرِ صِحتَ سُپِرِين، آهي نه آزارُ؛
مجلسَ ويرَ مِٺو ٿئي، ڪوٺِيندي قَهارُ؛
خَنجرُ تنهن خُوب هڻي، جنهن سين ٿئي يارُ
صاحِبُ رَبُّ ستَّارُسوجھي رَڳُون ساهَ جون

جب سے محبوب چارہ ساز ہواہو گیا دور دل کا ہر آزار
وہی غمخوار بن کے آیا ہےہم سمجھتے رہے جسے قہار
ایک انعام ہے دل پر خوں ایک نعمت ہے زخم خنجر یار
ہاتھ اس کا رگوں پہ رہتا ہےآشنائے نفس ہے وہ ہشیار

 

پتنگ چائِين پاڻَ کي، ته اَچي آڳِ اُجھاءِ!
پَچَڻَ گھڻا پَچائِيا، تون پَچَڻَ کي پَچاءِ!
واقُف ٿِي وِساءِ، آڳِ نه ڏِجي عامَ کي.

اگر تم بھی ہو پروانوں میں شامل
تو آؤ اور یہ شعلے بجھاؤ
ہزاروں‘ آنچ پر اس کی جلے ہیں
مزا جب ہے کہ تم اس کو جلاؤ
کہیں ظاہر نہ ہو جائیں کسی پر
رموزِ عاشقی دل میں چھپاؤ

 

عاشقَ! معشوقن جو، وٺِي ويھ دُڪاڻ؛
پَـئِجِ پيش پِريُنِ جي، پَٽِيءَ وجِھي پاڻ؛
ته تون تنِين ساڻُ، سدا رهِين سُرخُرو.

منزل عشق ہے در محبوب
سجدہ ریزی کرو عقیدت سے
کیا عجب تم پہ مہربان ہو جائے
اور نوازے تمہیں محبت سے
کاش مل جائے خوب و زشت کا راز
تمہیں اس رہبر حقیقت سے

 

جُسي ۾ جَبّار جو، خَفِي خِيمو کوڙ؛
جَلِّي تون زبان سين، چار ئِي پهر چور؛
فڪر سين فُرقان ۾، اِسم اعظم ڏور؛
ٻيا در وڃي مَ ووڙ، اِيُ اَمُلُ اِئائِين سَپَجي.

اسم اعظم ہو یا ہو ذکر جلی
ہے بہ طور ایک ہی مفہوم
جیسے ہوتا ہے سیپ میں موتی
ہے یونہی دل میں ذاتِ نامعلوم
غیر کے در سے کچھ نہ پائے گا
اس کے در سے جو ہو گیا محروم

 

عاشقن الله، ويروتار نه وسري؛
آهَ ڪَرِيندي ساهُ، ڪڏهن ويندو نڪري.

ہر تمنائے طالب وحدت ذکر اللہ سے مچلتی ہے
روح ان کی بس ایک آہ کے ساتھ جسدِ خاک سے نکلتی ہے

 

پاڻَهِين جَلَّ جَلَالَہٗ، پاڻهِين جانِ جمالُ
پاڻهِين صورت پِرِينءَ جي پاڻهِين حُسن ڪَمالُ
پاڻهِين پِر مُريد ٿئي، پاڻهِين پاڻَ خيالُ
سڀ سڀوئي حالُ، منجھان هي معلوم ٿئي

غیر محدود ہے جلال اس کا
دھر آئینۂ جمال اس کا
آپ رہبر ہے آپ ہی راہی
ختم خود اس پہ ہے کمال اس کا
اس کا احساس ہر جگہ ہر وقت
کہ ہم گیر ہے خیال اس کا
روح انسان میں جلوۂ فرما ہے
پر تو حسن بے مثال اس کا

 

اس مضمون پر اپنے ثاثرات کا اظہار کریں

یہ مضمون اپنے دوستوں سے شئیر کریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے